حمد باری تعالیٰ

غیرت کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے : اعظم سلفی مغل

سیدھی سی بات ہے ہماری غیرت کا جنازہ ہم خود اپنے ہی ہاتھوں سے نکال چکے ہیں. کفار کی اس فکری یلغار کے سامنے بے بس اسی وجہ سے ہیں.
نہ بیٹی آپ کے کنٹرول میں اور نہ ہی بہن آپ کے زیر نظر.
بہن کے سر سے آنچل تو ہم نے خود کھینچی ہے
بیٹی کے عزت کو تو ہم نے خود داؤ پر لگایا ہے.
معاشرے میں بے حیائی، فحاشی اور بے راہ روی کے ذمہ دار ہم خود ہیں.
محبت کے نام پر عزتوں پر نقب تو ہم خود لگا رہے ہیں.
شرم و حیا نام کی چیز دور دور تک نظر نہیں آتی.
الزام مغربی میڈیا پر؟
مغربی تہذیب پر؟
جی ہاں یہ بھی ٹھیک ہے.

لیکن جناب کیا میڈیا ہمیں مجبور کرتا ہے کہ عفت و عظمت فروشی کے دن کو مناؤ؟

نہیں بالکل نہیں!
اب تو پر پابندی ہے میڈیا کا مسئلہ بھی حل ہوا.
تو اب کیا یہ شونے مونے کاکے حیا فروشی کے دن کے دفاع میں اسلام کو پھبتیاں کسیں گے اور کسی محبوبہ کو پھول تھمانے سے گریز کریں گے؟
بالکل نہیں.

تو محترم قارئین!
اس لعنت سے بچنے کے لیے ہمیں برائیوں سے بچنا ہوگا
برائیوں کی طرف کھلنے والے دریچوں کو بند کرنا ہو گا.

گھر میں اسلامی ماحول کی اشد ضرورت ہے
اسلامی تعلیم و تربیت سے گھر میں پھلنے پھولنے والے بچوں کو سنوارنا ہوگا
تاکہ عزتوں کی پامالی اور معاشرے کو بگاڑ سے بچایا جا سکتا ہے.

حیا فروشی کے دن کو منانے والوں کو اپنے ایمان کی فکر کرنی چاہیے

کیا محبت چاہت اور عقیدت کا مقدس جذبہ اسی ایک دن کے لیے محتاج رہ گیا ہے؟ کہ آج کہ دور کا انسان اس کے اظہار کے لیے ایک دن بھی بمشکل نکالتا ہے۔ انسان توانسان ہے جو پیار و محبت اور چاہت وعقیدت کا مجسم پیکر اور منبع ھے ہے لیکن اس مصروفیت کے دور میں اپنے فلسفہ انس کو ہی بھول چکا ہے اور خود ہی بے حسی اور خون سفید ہونے کی صداہیں بھی بلند کرتا ہے۔
افسوس ناک بات یہ ہے کہ اس کام میں سب سے زیادہ پڑھے لکھے طبقے کو دیکھتے ہیں جو ذیادہ تہذیب یافتہ یونیورسٹی اور کالج پڑھنے والے ہیں.
والدین نے اعتماد کیا زندگی سنوارنے کے لیے بھیجا اور ہم نے اس اعتماد کا جنازہ نکالنے میں ذرا برابر بھی کسر نہیں چھوڑی.
اسی دن کو منانے کے نشے میں اپنے گھر میں موجود مقدس رشتوں کو بھی بھول جاتے ہیں.

زرا سوچیے کہ ہم تحفے دےکر اور نام نہاد آزادی دے کر محبت بڑھا رہے ہیں یا شرم و حیاء کا جنازہ نکال رہے ہیں۔
کاش اس بےحس معاشرے کو کوئی یہ بتائے کہ اظہار محبت کے لیے کوئی ایک دن مختص نہیں ھے ھر دن محبت کا دن ھے مگر حیا کے ساتھ.

آؤ اگر محبت کرنا چاہتے ہو تو مجھ سے کرو

پھولوں کے تحائف مجھے دو

ایک دن نہیں ہمیشہ

محبت بڑھے گی
اللہ تعالٰی بھی خوش بندہ بھی خوش

اللہ ہمیں صحیح اسلامی تعلیمات پر عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائے آمین

فیس بک تبصرے